چوہدری نثار کا عمران سے کبوتر کے ذریعے رابطہ، ن لیگ میں‌اسی تنخواہ پر کام کرنے کا عندیہ دیدیا

ch nisar

راولپنڈی (پاک نیوز) سابق وزیرداخلہ چوہدری نثار نے اسی تنخواہ پر مسلم لیگ ن میں کام کرنے کا عندیہ دے دیا، عمران خان کے ساتھ رابطے کے ذریعے کے سوال پر کبوتر پر مدعا ڈال دیا.
اسلام آباد میں اپنی میڈیا کانفرنس کے دوران چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ انہوں نے ساری زندگی مسلم لیگ (ن) اور نوازشریف کا بوجھ اٹھایا لیکن کسی کی جوتیاں اٹھانے والے نہیں ہیں۔
انہوں نے کہا کہ لوگ مجھ پر کسی گروپ میں شامل ہونے کا الزام لگاتے ہیں اور مجھے علم ہے کہ سب کا سوال یہ ہے کہ میں مسلم لیگ (ن) میں رہوں گا یا نہیں؟ یہ سوال پوچھنے اور سوچنے والے میری سیاسی تاریخ دیکھ لیں، گزشتہ 35 سال سے ایک ہی جماعت اور نوازشریف کا ساتھی رہا، بڑے بڑے امتحانات آئے لیکن اپنی جماعت کو نہیں چھوڑا، لہذٰا 2 نمبر آدمیوں کی باتوں میں کوئی نہ آئے۔ آج تک کسی گروپ کا حصہ بنا اور نا ہی آئندہ اس کا امکان ہے اور نہ ہی کبھی پارٹی کو مایوس کروں گا۔
چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ میں کسی تحریک کا حصہ نہیں اور نا ہی کسی کا آرڈر لے کر آیا ہوں، میں کسی سے آرڈر نہیں لیتا بلکہ سیاسی فیصلے اپنی مرضی سے کرتا ہوں۔ عمران اور نوازشریف میرے سوال پر چپ ہوجاتے ہیں تو اس میں میرا کیا قصور ہے۔ یہ حقیقت ہے کہ نوازشریف مسلم لیگ (ن) کے بانی ہیں لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ میں بھی پارٹی کا بانی رکن ہوں اور میرے علاوہ کوئی بھی شخص بانی رکن نہیں، پارٹی کے تمام ارکان قابل احترام اور معزز ہیں لیکن مسلم لیگ (ن) کے موجودہ 70 فیصد سے زیادہ رہمناؤں نے پارٹی چھوڑی اور پھر شمولیت اختیار کی۔ لیکن میں تسلسل کے ساتھ اپنی جماعت کے ساتھ جڑا رہا۔
سابق وزیرداخلہ نے کہا کہ میں نے آج تک کبھی پارٹی سے کہنے کے باوجود کسی عہدے کا تقاضا نہیں کیا، میں واحد شخص تھا کہ جب پاناما لیکس شروع ہوا تو میں نے نواز شریف کو سپریم کورٹ نہ جانے کا مشورہ دیا، اور کہا کہ نواز شریف کو نقصان ہوسکتا ہے، اس کے بعد نواز شریف کو قومی اسمبلی میں تقریر نہ کرنے کا بھی مشودہ دیا، جے آئی ٹی بنی تو میں نے کہا کہ آرمی چیف کو بلائیں اور کہیں کہ فوج کے بریگیڈئرز اس میں نہیں ہونے چاہئیں کیونکہ جے آئی ٹی نے فیصلہ ہمارے حق میں کیا تو اپوزیشن اس فیصلے کو متنازع بنا دے گی اور اگر ہمارے خلاف کیا تو ہم شور مچائیں گے، نواز شریف نے 2 بار وعدہ کیا لیکن وہ میٹنگ نہیں ہوئی۔
پریس کانفرنس کے دوران چوہدری نثار علی خان سے سوال کیا گیا کہ دھرنے سے لے کر اب تک عمران خان آپ کا ذکر کرتے ہیں آئے اور کچھ روز پہلے وہ لاہور سے اچانک دورہ ختم کر کے واپس اسلام آباد روانہ ہونے لگے تو بڑی وکٹ گرنے کا عندیہ بھی دیا جبکہ آپ کا نام جب بھی ان کے سامنے لیا جاتا ہے تو وہ ایک معنی خیز مسکراہٹ دیتے ہیں۔ برائے مہربانی آج یہ واضح کر دیں کہ کیا آپ واقعی عمران خان کیساتھ رابطے میں ہیں؟
چوہدری نثار علی خان نے اتنے لمبے سوال کا دو لفظوں میں برجستہ جواب دیتے ہوئے کہا ”میرا عمران خان کیساتھ کبوتر کے ذریعے رابطہ ہے۔“ ان کا جواب سن کر صحافی قہقہہ لگانے پر مجبور ہو گئے اور وہ خود بھی اپنی ہنسی پر قابو نہ پا سکے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.