بھارت امریکہ سے بھی ہاتھ کرگیا

india

واشنگٹن (انٹرنیشنل ڈیسک ) بھارت ایسا ملک ہے جوکہ کسی کو بھی دھوکہ دینے سے باز نہیں‌آتا، موجودہ دور میں امریکا اس کا سب سے قریبی حلیف ہے اور ہر فیلڈ میں اس کی بھرپور مدد کررہاہےمگر بھارتی اسے بھی چونا لگانے سے باز نہیں‌ آئے اور ایسا چکمہ دیا کہ امریکہ کو شکایت لیکر ڈبلیو ٹی او کے پاس جانا پڑ گیا.
امریکا نے عالمی تجارتی تنظیم ’ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن‘ میں بھارت کے خلاف ایک شکایت درج کرائی ہے۔ امریکا کا کہنا ہے کہ بھارت نے گندم اور چاول کی فصل کے حوالے سے ’مارکیٹ پرائس سپورٹ‘ کے بارے میں معلومات کم کر کے بتائی ہیں۔
امریکی حکام نے اپنی شکایت میں پیداوار کی مقدار اور اس کی قدر کے علاوہ کرنسی کے تبادلے میں غلط بیانیوں کی نشاندہی کی ہے۔ فرانسیسی خبر رساں ادارے کے مطابق یو ایس ٹریڈ کے نمائندے اور ایگریکلچر ڈیپارٹمنٹ کی طرف سے جاری ہونے والے ایک مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے کہ کسی ملک کی طرف سے ایک حد سے زیادہ ’مارکیٹ پرائس سپورٹ‘ یا پھر اسے کم کر کے بتانا عالمی تجارتی تنظیم کے قوانین کی خلاف ورزی ہے۔

اس مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے، ’’امریکی تخمینوں سے یہ معلوم ہوا ہے کہ بھارت نے چاول اور گندم کے معاملے میں تجارتی منڈیوں میں قیمتوں کو بحال رکھنے کے لیے جو مالی مدد فراہم کی اس کی قدر کم کر کے بتائی ہے۔‘‘ بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ جو مالی مدد فراہم کی گئی ’’وہ اس شرح سے کہیں زیادہ ہے جس کی اجازت ہے۔‘‘

ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن کے قوانین کے مطابق تمام رکن ریاستوں کے لیے ضروری ہے کہ وہ ہر سال اس بارے میں رپورٹ اس ادارے کو فراہم کریں کہ ریاستی کمپنیوں کی طرف سے کون کون سی مصنوعات کو درآمد یا برآمد کیا گیا۔ جس کے بعد اس تنظیم کی رُکن کوئی بھی دوسری ریاست اگر سمجھتی ہے کہ داخل کرائے گئی معلومات درست نہیں ہے تو پھر وہ ایک جوابی نوٹیفیکشن داخل کرا سکتی ہے۔
امریکا کی طرف سے جوابی نوٹیفیکیشن چار مئی کو داخل کرایا گیا اور یہ اس تجارتی تنظیم میں داخل کرایا گیا پہلا جوابی نوٹیفکیشن ہے۔

یو ایس ٹریڈ کے نمائندے رابرٹ لائتھائزر کے مطابق، ’’امریکا اس بات کی توقع کرتا ہے کہ ہمارے تجارتی پارٹنر رپورٹنگ سے متعلق ان ضروریات پر عمل کریں جن پر انہوں نے ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن میں شامل ہوتے وقت اتفاق کیا تھا۔‘‘

امریکی وزیر زراعت سونی پیرڈو کے مطابق، ’’بھارت ایک بڑی مارکیٹ کی نمائندگی کرتا ہے اور ہم چاہتے ہیں کہ بھارت میں امریکی مصنوعات کو زیادہ رسائی دی جائے، مگر بھارت کو چاہیے کہ وہ اپنے اقدامات کے بارے میں زیادہ شفافیت اختیار کرے۔‘‘ فرانسیسی خبررساں‌ادارے کے مطابق امریکی حکام نے اپنی شکایت میں پیداوار کی مقدار اور اس کی قدر کے علاوہ کرنسی کے تبادلے میں غلط بیانیوں کی نشاندہی کی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.